اعتزاز احسن ۔۔۔۔ہیرو یا زیرو؟


اعتزاز احسن۔۔۔۔۔۔ہیرو یا زیرو؟
”اعتزاز احسن نے سینیٹ کی سیٹ کی خاطر اپنا موقف تبدیل کر لیا ۔۔۔یو ٹرن لے لیا۔۔۔زرداری اور گیلانی کی کرپشن کو تحفظ دینے کے لیے میدان میں آگئے۔۔۔این آر او کے مقدمے میں بھاری فیس حکومتی خزانے سے وصول کریںگے۔۔۔گویا اعتزاز احسن ایک قلابازیاں کھانے والا ،لالچی ،مالی مفاد اور عہدوں کے پیچھے بھاگنے والا ،بدعنوانیوں کو تحفظ دینے والا ۔۔۔ بے اصول شخص وغیر ہ وغیرہ ۔ حیرت کی بات ہے کل کا قومی ہیرو آج غدار اور زیرو کے طورپر کیوں پیش کیا جارہا ہے۔اس پر تفصیلی تحریر اپنی ذمہ داری سمجھتا ہوں۔ بالفرض اعتزاز احسن کی شخصیت کے حوالے سے اس پروپیگنڈے کودرست بھی مان لیا جائے تو پھر صرف اتنا کہا جاسکتا ہے کہ آسمان سے کوئی فرشتے ہی لے آئیں۔۔اس وقت اعتزاز احسن کی شخصیت کی بجائے میری تحریر کا مرکزی نقطہ وہ پس منظر ہے جس سے گوشہ عافیت میں بیٹھے اعتزاز احسن یہ سارے الزامات اپنے اوپر لینے کے لیے تیار ہو گئے ۔
حکومت کے وکیل اورغیر اعلانیہ ترجمان بابر اعوان کو توہین عدالت کا نوٹس ملا ۔موصوف نے عدالت سے باہر آکر پنجابی فلموں کے ہیروسلطان راہی (مرحوم ) کی طرح عدالت کو اس طرح للکارا ”نوٹس ملیا ککھ نہ ہلیا۔کیوں سوہنڑیا دا گلاں کراں۔میں تے لکھ واری بسم اللہ کراں“ ایک یہ سوچ ہے اور دوسری طرف وزیر اعظم کو 16جنوری کو توہین عدالت کا نوٹس جاری ہوا تو عدالت میں اس موقع پر موجود وفاقی وزیر قانون مولا بخش چانڈیو نے کوئی بھڑک مارے بغیر انتہائی سنجیدگی اور تشویش کے ساتھ میڈیا کے سامنے بات کرتے ہوئے کہاکہ ”وزیر اعظم کو سپریم کورٹ کا نوٹس معمولی بات نہیں ۔ اس معاملے پر مشاورت کے بعد رد عمل دیا جائے گا۔“بات صرف اتنی ہے یہ ایک اورسوچ تھی جس کی سرشت میں بھڑکیں ،گالیاں اور لڑائی سرے سے موجود ہی نہیں۔17جنوری عدالت عظمی نے بابر اعوان کی وکالت کا لائسنس عارضی طورپر معطل کیا توموصوف اپنی گاڑی میں بیٹھے اور سیدھے ایوان صدر پہنچ گئے ۔سرکاری میڈیا جتنی مرضی تردید کرے مگر یہ سچ ہے کہ”ڈاکٹر“ بابر اعوان نے اپنی زبان کی چالاکی سے صدر زرداری کو اس بات پر آمادہ کر لیا تھا کہ عدلیہ کو ”زوردار“جواب دینے کے لیے ناگزیر ہے کہ انہیں وزیر قانون بنا دیا جائے۔قصہ یوں ہے کہ وزیر قانون مولا بخش چانڈیو کو ایوان صدر طلب کرکے بتایا گیا کہ وسیع تر ”قومی مفاد“ میں آپ وزارت قانون سے مستعفی ہو جائیں۔جس پر انہوں نے سر تسلیم خم کرتے ہوئے لبیک کہا۔دوسری جانب ایک اور سوچ کام کر رہی تھی جس کی نمائندگی اعتزاز احسن ،رضاربانی ،قمر الزمان قائرہ،خورشید شاہ،مخدوم امین فہیم،آفتاب شابان میرانی،یوسف تالپور اور اس قبیل کے بہت سے دوسرے لوگ کر رہے تھے۔ وزیر اعظم اپنے وکیل اعتزاز کے ساتھ بیٹھے تھے کہ انہیں یہ خبر ملی مولا بخش چانڈیو مستعفی ہو رہے ہیں اور بابر اعوان کو دوبارہ وزیر قانون بنایا جا رہا ہے۔وزیر اعظم اور صدر کے درمیان ممکن ہے کہ اختلاف رائے ہوتا رہا ہو مگر اب کی بار وزیر اعظم پہلی بار صدارتی حکم کی ”نافرمانی “ کا فیصلہ کر چکے تھے۔انہوں نے بذریعہ فون صدر صاحب کو قائل کرنے کی کوشش کی کہ یہ فیصلہ عدلیہ اور حکومت کے درمیان انتہا کوپہنچے ہوئے تناﺅ کے ماحول پرمزید تیل چھڑکنے کے مترادف ہوگاجس کے نتیجے میں کوئی بڑا سانحہ رونما ہو سکتا ہے۔اس کے ساتھ ہی وزیر اعظم نے صدر کو صا ف لفظوں میں بتا دیا کہ اگر واقعی ہی مولابخش چانڈیو نے استعفیٰ دے دیا ہے تو وہ بحیثیت وزیرا عظم بابر اعوان کے علاوہ کسی بھی معقول شخص کا بطور وزیر قانون نوٹیفکیشن جاری کرسکتے ہیں۔اس ساری کہانی کا دلچسپ پہلو یہ ہے کہ سینٹ کے اجلاس میں بیٹھے ہوئے وزیر قانون کو پیغام دیا گیا کہ وہ اجلاس سے اٹھ کر فوری طور پر پارلیمنٹ ہاﺅس کے باہر کھڑے میڈیا کے سامنے دو ٹوک الفاظ میں اپنے مستعفی ہونے کی تردید کریں اور ایسا ہی ہوا۔اس سے ہر گز یہ تاثر نہیں لینا چاہیے کہ وزیر اعظم اور صدر کے درمیان کوئی محاذ آرائی تھی بلکہ حقیقت یہ ہے کہ کچھ عرصے سے پیپلز پارٹی کے سنیئر اور سنجیدہ رہنما ان کوششوں میں مصروف تھے کہ کسی طرح ایوان صدر کے ”شاہینوں “کی اداروں کے ساتھ اور خاص کر عدالت عظمیٰ کے ساتھ تصادم اور محاذ آرائی کی روش کوختم کر کے حکومت کو مسخرے قسم کے ترجمانوں کے شر سے محفوظ بنایا جائے ۔
بالآخر پارٹی کا سنجیدہ طبقہ اپنی کوششوں میں کامیاب ہوا اور محاذ آرائی کے بجائے وزیر اعظم احترام کے ساتھ عدالت عظمی میں پیش ہوئے ۔دنیا کو کم از کم یہ تاثر تو گیا کہ ایک ملک کا وزیر اعظم عدالت کے کٹہرے میں کھڑا اپنی صفائی پیش کر رہا ہے۔اگر اس جگہ پر پرانے ”جادوگر “ ہوتے تو شاید ہماری تاریخ کا بد ترین سانحہ جس کی بہت سے لوگ توقع لگائے بیٹھے تھے رو نما ہوجاتا ۔
کاش پارٹی کے جو چہرے اورسوچ 19فروری کو سپریم کورٹ میں نمائندگی کرر ہے تھے۔ چار سال پہلے انہیں وہ مقام دے دیا جاتا تو آج پیپلز پارٹی جس رسوائی سے گزر رہی ہے کم از کم اس کا سامنا نہ کرنا پڑتا۔

Posted on January 21, 2012, in Current Affairs. Bookmark the permalink. 2 Comments.

  1. Mr. Gillani,

    I am writing in response to your article Aitzaz hero or zero. In the article you have given a long story of the internal squabble of PPP. But to be honest with you, that squabble has nothing to do with the people of Pakistan. If PPP was law abiding party and consists of decent and credible people it wouldn’t be facing the troubles in the courts in the first place.

    For example you mentioned Mr. Amin Fahim in the list of senior and serious PPP politicians. He is the same man who conveniently forgot how 4 crores landed in his Bank Account. It is a shame that in Pakistan the standards have slipped so much that corrupt people like Amin Fahim, first of all get away with corruption so easily because the SC of Pakistan is more interested to collect money rather than punish the culprits. I have already written to CJ pointing out this hopeless policy which in truth is travesty of justice. No where in the World such policies adopted or exist. If there was any law in the country Mr. Fahim would have been disqualified from holding public office and jailed for his corruption.

    So would be the President and the Prime Minister, both of them are corrupt to the core. No one should forget this whole drama is played with the people of Pakistan to save the skin of corrupt Zardari. He shouldn’t be awarded any salutations and should be call what he is, a thief. Same is Gilani. He was broke before the elections and now wears suits worth as much as £10,000. How does he afford it on his salary and perks? These are the questions people like you keep forgetting.

    Pakistanis are fed up to be taken for a ride under no circumstances excuses like these would be acceptable any more. The biggest problem is our Journalists and media pundits, analysts, who due to their political affiliations and in some cases their corruption, keep tagging the lines of their respective favourite political parties, no matter how absurd the situation may be, or how many lies are shoved down the nation’s throats.

    Aitzaz is nothing but the chip of the old block, not different from the thieves of PPP. He has his hands in the pie too, and has plenty of quotas of Gas etc in his family’s name.

    PPP and its politics are so yester years. No more lies, deceptions, theft could be tolerated by people of Pakistan. If anyone of those you have listed as credible have any decency in them, they would have left PPP, which we call Permanent Plunder Party.

    I and many like minded people now don’t even consider Benazir Bhutto as an icon, if anything she was the catalysts of corruption and worked hands and gloves with her husband Zardari.

    How can we accept BB as clean when during her life, the wealth Zardari accumulated from his loot and plunder was increasing at an alarming rate? There is no chance in hell that an intelligent lady wouldn’t have sussed out how Zardari is making money and increasing his property portfolio and bank balances so rapidly, without having any sources for income. A woman who cannot detect corruption in her own household is not suitable to run a country. She must be the most stupid person on the face of this earth if she didn’t suss it out. Either way, she should have disqualified herself to hold any office. But the point born out from the facts, she was not stupid but corrupt. This is evident from oil for food scam she ran with another corrupt in PPP, Rehman Malik.

    PPP has fooled the nation enough with the con trick of Shaheed, people are getting wiser, PPP’s game is over. Anyone who is still siding with these crooks need their heads examined. Sooner or later shit is going to hit the fan, make sure you are not around when it does.

    http://crankthatskunk.wordpress.com/2011/12/25/pmln-shenanigans-on-assets-issue/

  2. بہت خوبصورت تجزیہ۔۔۔۔۔ عابد گیلانی صاحب۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: